نوجوان نسل قوم کا سرمایہ افتخار

25

(تحریر: عبدالباسط علوی)

ہر دور میں تبدیلی اور ترقی کے علمبردار نوجوان ہی رہے ہیں۔ نوجوان مستقبل کے معمار، اختراع کے نمائندے اور سماجی ارتقاء کے محافظ ہیں۔ نوجوانوں کی اہمیت سے انکار نہیں کیا جا سکتا۔
نوجوان وہ وہ متحرک قوت ہیں جو تہذیبوں کو آگے بڑھاتی ہے۔ چیلنجنگ اہداف سے لے کر ٹیکنالوجی، سائنس، آرٹس اور سوشل سرگرمیوں میں پیش رفت تک نوجوانوں کی نسل تبدیلی کی تحریکوں میں سب سے آگے ہے۔

پاکستان نے ہمارے لیے کیا کیا؟ ’’پاکستان کیوں بنا؟‘‘ ’’ہمارا ملک اچھا نہیں ہے۔‘‘ فوج نے ہمارے لیے کیا کیا؟ فوج نے ایسا کیوں کیا؟ یہ اس قسم کے کئی سوالات میں سے چند ہیں جو چند مایوس یا ناراض نوجوانوں کے گروہ میں اٹھائے جاتے اور زیر بحث آتے ہیں۔ جب بھی وہ کچھ غلط دیکھتے ہیں تو ان کی زبانیں ملک اور فوج کی طرف اٹھتی ہیں۔

یاد رہے کہ مہذب معاشروں میں ہر عمل اخلاقیات کے دائرے میں رہتے ہوئے کیا جاتا ہے۔ ان معاشروں کے لوگ اخلاقیات کا دائرہ کبھی نہیں چھوڑتے۔ وہاں گالی گلوچ اور لعن طعن کی حوصلہ شکنی کی جاتی ہے۔
قوانین اور ضابطے فوری طور پر حرکت میں آتے ہیں اور وہ بغیر ثبوت کے جھوٹے اور بے بنیاد الزامات لگانے میں ملوث افراد کو سزا دیتے ہیں۔ ہتک عزت اور بغیر ثبوت کے الزامات کے بارے میں سخت قوانین بھی ان معاشروں میں غلط اور بے بنیاد الزامات کو روکنے میں مدد کرتے ہیں۔ وہاں ثبوت فراہم کرنے کا بوجھ الزام لگانے والے کے کندھوں پر ہوتا ہے۔

بدقسمتی سے ہم اخلاقیات اور اخلاقی اقدار پر زیادہ توجہ نہیں دیتے۔ شواہد کے بغیر گالی گلوچ، بہتان تراشی اور الزامات کا کلچر عام ہے اور پوری رفتار سے جاری ہے۔ ہر کوئی دوسرے کے پیچھے ہے۔
گھروں، بازاروں، دفتروں اور اجتماعات میں ہر طرف افراتفری کا عالم ہے۔ بد سلوکی اور جھوٹے الزامات کا ایک وسیع طوفان ہماری سیاست میں بھی عام ہے۔ ہر کوئی “میں میں” کی گردان کر رہا ہے اور دوسروں کے لیے برداشت کا مادہ ختم ہو رہا ہے۔
ہر کوئی دوسرے کے سر پر پاؤں رکھ کر زیادہ سے زیادہ کامیابیاں سمیٹنے کے لیے مرا جا رہا ہے۔
دین سے محبت اور احترام ہر مسلمان پر فرض ہے۔ دین میں توحید اور عقیدہ ختم نبوت جیسے بہت سے معاملات ہیں جن کو بغیر سوچے سمجھے اور بحث ومباحثہ کے مان لینا چاہیے اور ذرا سا شک بھی دین کے دروازے بند کرنے کا سبب بن سکتا ہے۔
دین سے محبت کے بعد وطن سے محبت کی باری آتی ہے اور اسلام میں بھی وطن سے محبت کو ایک خاص درجہ دیا گیا ہے۔ ملکی آئین اور قوانین کی پاسداری بھی ہر شہری پر لازم ہے اور یہ کسی بھی مہذب معاشرے کا ایک اہم پہلو ہے۔

مسلح افواج ملک کی نظریاتی سرحدوں کی حفاظت کی ذمہ دار ہیں۔ پاک فوج دنیا کی بہترین افواج میں سے ایک ہے۔ ہمارے بہادر بیٹوں اور بیٹیوں کی حب الوطنی، پیشہ ورانہ مہارت اور لازوال قربانیوں کی وجہ سے کوئی بھی ہمارے پیارے ملک کی طرف میلی آنکھ سے دیکھنے کی جرات نہیں کر سکتا۔
ہمارے آرام اور سکون کے لیے اپنی نیندیں قربان کرنے والے بہادر سپاہی بلاشبہ ہمارے ہیرو ہیں۔ ہماری طویل ترین اور مشکل ترین نظریاتی سرحدوں کی بے خوفی سے حفاظت کرنے والی فوج، بحریہ اور فضائیہ کے جوان ہماری سرزمین کے بہادر اور قابل احترام فرزند ہیں۔ ہماری ملٹری انٹیلی جنس ایجنسی بھی دنیا کی بہترین ایجنسیوں میں سے ایک ہے اور یہ ہمارے دشمنوں کے لیے بہت بڑا خطرہ ہے۔
پاک فوج نے اپنی بیرونی اور نظریاتی سرحدوں کی حفاظت کے ساتھ ساتھ اندرونی محاذوں پر بھی گراں قدر خدمات سرانجام دی ہیں۔ قوم پاک فوج کی کاوشوں اور قربانیوں کی شکر گزار ہے جس کی بدولت دہشت گردی اور انتہا پسندی کا خاتمہ ہو رہا ہے اور حالات تیزی سے بہتر ہو رہے ہیں۔
پاک فوج قدرتی آفات سے نمٹنے اور متاثرین کی مدد کرنے میں ہمیشہ پیش پیش رہی ہے۔ ہمارے قومی اثاثوں کی حفاظت، امن و امان، صحت، تعلیم، انفراسٹرکچر کی تعمیر اور دیگر شعبوں میں پاک فوج کی گرانقدر خدمات سے انکار نہیں کیا جا سکتا۔
مردم شماری اور انتخابات کا شفاف انعقاد پاک فوج کی شرکت اور بے لوث تعاون کے بغیر ناممکن ہے۔ بلاشبہ پاک فوج ایسے ملک میں امید کی واحد کرن ہے جو کرپشن اور دہشت گردی کی لپیٹ میں ہے۔ اگر حب الوطنی کے ترازو میں سب کو تولا جائے تو فوج کا پلڑا بھاری ہوگا۔
اگر آپ ترقی یافتہ ممالک کو دیکھیں تو آپ کو معلوم ہوگا کہ ان ممالک کے عوام اور حکمران اپنی مسلح افواج کی بھرپور اخلاقی حمایت کرتے ہیں۔ درحقیقت ان کی مسلح افواج کو اپنے لوگوں سے آکسیجن ملتی ہے۔

اس میں کوئی شک نہیں کہ اظہار رائے کی آزادی کسی بھی مہذب معاشرے کے لیے بہت اہم ہے۔ لیکن ترقی یافتہ ممالک میں بھی کچھ اصول اور حدود ہیں جو لوگوں کو مذہب، ملک اور فوج کے خلاف بات کرنے سے روکتے ہیں۔

قارئین، مہذب معاشرے میں آزادی اظہار کی اہمیت سے کوئی انکار نہیں کر سکتا لیکن اکثر اسے غلط طریقے سے لیا جاتا ہے۔ جھوٹے الزامات سے بچنے کو یقینی بناتے ہوئے عوامی مسائل میں اظہار رائے کی آزادی کو یقینی بنانا ضروری ہے۔
یہ ہماری ستم ظریفی ہے کہ پاکستان میں آزادی اظہار کے نام پر مذہب، ملک اور مسلح افواج کو نشانہ بنایا جاتا ہے اور خاص طور پر سوشل میڈیا کے ذریعے اس کی تشہیر اور پھیلاؤ جاری ہے۔
یہ بڑی حیرت کی بات ہے کہ نام نہاد دانشور کرپشن، مہنگائی، بے روزگاری وغیرہ جیسے عوامی مسائل پر خاموش رہتے ہیں لیکن اپنی توپوں کا رخ مذہب، ملک اور مسلح افواج کی طرف اٹھائے رہتے ہیں۔

یہ ریاست کی ذمہ داری ہے کہ وہ لوگوں کے ایک چھوٹے سے گروہ کی طرف سے ان غیر عقلی قسم کی چیزوں کو روکنے کے لیے سخت ضابطے بنائے اور ان پر عمل درآمد کرے۔ ایسا کلچر ملک کے وسیع تر مفادات کے لیے قطعی طور پر اچھا نہیں ہے۔

پاکستان جس کے نوجوان کل آبادی کا ایک نمایاں حصہ ہیں اپنی تاریخ کے ایک اہم موڑ پر کھڑا ہے۔ پاکستان کے نوجوان ایک مضبوط قوت کی نمائندگی کرتے ہیں، جو ٹیلنٹ، تخلیقی اور ناقابل استعمال صلاحیتوں سے بھرپور ہے۔
حالیہ برسوں میں نوجوانوں کو بااختیار بنانے اور سماجی و اقتصادی ترقی کے لیے بامعنی مواقع فراہم کر کے اس اہم طبقے کو استعمال کرنے کی ضرورت کو تسلیم کیا جا رہا ہے۔

تعلیم اور کاروبار سے لے کر جدت اور شہری مصروفیت تک، پاکستان میں نوجوانوں کے لیے مواقع کا منظر نامہ متنوع اور امید افزا ہے۔

تعلیم ترقی کی بنیاد ہے اور معیاری تعلیم میں سرمایہ کاری پاکستان کے نوجوانوں کی صلاحیتوں کو کھولنے کے لیے سب سے اہم ہے۔ وہ اقدامات جن کا مقصد تعلیم تک رسائی کو بہتر بنانا، تدریس کے معیار کو بڑھانا اور مہارت کی ترقی کو فروغ دینا ہے، نوجوانوں کو بڑھتی ہوئی مسابقتی عالمی معیشت میں کامیابی کے لیے ضروری علم اور صلاحیتوں سے آراستہ کرنے کے لیے ضروری ہیں۔
مزید برآں، تعلیم میں صنفی تفاوت کو دور کرنا اور معاشرے کے تمام طبقات کے لیے مساوی رسائی کو یقینی بنانا شمولیت اور سماجی نقل و حرکت کو فروغ دینے کے لیے بہت ضروری ہے۔ انٹرپرینیورشپ پاکستان میں معاشی ترقی اور روزگار کے مواقع پیدا کرنے کے ایک اہم محرک کے طور پر ابھری ہے۔
ایک بڑھتے ہوئے سٹارٹ اپ ماحولیاتی نظام اور جدت طرازی کی بڑھتی ہوئی طلب کے ساتھ نوجوانوں کے لیے انٹرپرینیورشپ میں قدم رکھنے اور اپنے آئیڈیاز کو کامیاب کاروبار میں تبدیل کرنے کے کافی مواقع ہیں۔
حکومت کے زیرقیادت اقدامات جیسے پرائم منسٹرز یوتھ انٹرپرینیورشپ سکیم اور مختلف انکیوبیشن پروگرامز خواہشمند کاروباریوں کو سپورٹ، رہنمائی اور فنڈنگ فراہم کرتے ہیں، جس سے وہ رکاوٹوں کو دور کرنے اور اپنے کاروباری عزائم کو پورا کرنے کے قابل ہو سکتے ہیں۔ دنیا بھر میں تیزی سے ڈیجیٹلائزیشن اور تکنیکی ترقی پاکستان میں نوجوانوں کے لیے بے مثال مواقع فراہم کرتی ہے۔
سافٹ ویئر ڈویلپمنٹ اور ڈیجیٹل مارکیٹنگ سے لے کر ای کامرس اور فری لانسنگ تک ڈیجیٹل اکانومی نوجوانوں کے لیے اپنی صلاحیتوں سے فائدہ اٹھانے کے بے شمار مواقع فراہم کرتی ہے۔ مزید برآں، ڈیجیٹل خواندگی کو فروغ دینے، انٹرنیٹ تک رسائی کو بڑھانے اور اختراعی مرکزوں کو فروغ دینے پر توجہ مرکوز کرنے والے اقدامات نوجوانوں کو سماجی و اقتصادی ترقی اور روزگار کی تخلیق کے لیے ٹیکنالوجی کی طاقت کو بروئے کار لانے کے لیے بااختیار بنا رہے ہیں۔
شہری اور سماجی اقدامات میں نوجوانوں کی شمولیت مثبت تبدیلی لانے اور فعال شہریت کی ثقافت کو فروغ دینے میں اہم کردار ادا کرتی ہے۔
نوجوانوں کی زیر قیادت تنظیمیں، رضاکارانہ پروگرام اور وکالت کی مہمیں سماجی عدم مساوات، ماحولیاتی پائیداری اور انسانی حقوق جیسے اہم مسائل کو حل کرنے میں اہم کردار ادا کرتی ہیں۔
نوجوانوں کو مشترکہ مقاصد کے لیے متحرک کر کے اور شہری شرکت کے لیے پلیٹ فارم مہیا کر کے پاکستان سماجی طور پر باشعور رہنماؤں کی ایک نسل کی پرورش کر سکتا ہے جو ایک زیادہ منصفانہ اور مساوی معاشرے کی تعمیر کے لیے پرعزم ہیں۔

بین الاقوامی نمائشیں اور ثقافتی تبادلے قابل قدر سیکھنے کے تجربات اور پاکستانی نوجوانوں کے لیے مواقع کی دنیا کے دروازے کھولتے ہیں۔ وظائف، تبادلے کے پروگرام اور یوتھ ایمبیسیڈر جیسے اقدامات نوجوانوں کو بیرون ملک تعلیم حاصل کرنے، ثقافتی تبادلے کے پروگراموں میں حصہ لینے اور متنوع پس منظر کے ساتھیوں کے ساتھ تعاون کرنے کے مواقع فراہم کرتے ہیں۔
یہ تجربات نہ صرف افق کو وسیع کرتے ہیں بلکہ نوجوانوں کو قابل قدر مہارتوں، نقطہ نظروں اور نیٹ ورکس سے بھی آراستہ کرتے ہیں جو ان کی ذاتی اور پیشہ ورانہ ترقی کو آگے بڑھا سکتے ہیں۔

قارئین، نوجوانوں کو منفی کے بجائے مثبت سرگرمیوں میں ملوث ہو کر ایک مثالی معاشرے کی تشکیل میں نمایاں کردار ادا کرنے کی ضرورت ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.