غیر جانبداری کے متقاضی منصب کے لیے مقابلہ

41

حالیہ سیاسی اتھل پتھل سے غبار اُلٹنے کے بعد اب تمام نظریں پاکستان کی قومی اسمبلی کے مقدس ایوان کی طرف لگی ہوئی ہیں۔
ایک اہم سیشن قریب آرہا ہے، جو نہ صرف ملک میں قانون سازی کے ایجنڈے کو تشکیل دے گا بلکہ آنے والے برسوں میں سیاسی منظر نامے کو بھی ترتیب دینے کا سبب بنے گا۔
سپیکر اور ڈپٹی سپیکر کے انتخاب کا مرحلہ طے پا گیا ہے، یہ اہم کردار ہیں جو پارلیمانی کارروائی کی باگ ڈور سنبھالتے ہیں۔
سیاسی شطرنج کے اس اونچے داؤ والے کھیل میں، امیدواروں کے دو سیٹ سامنے آئے ہیں، جن میں سے ہر ایک کو اپنے اپنے اتحاد کی حمایت حاصل ہے، اور اسپیکر کی کرسی پر قابض ہونے کے لیے کوشاں ہیں۔
سردار ایاز صادق اور غلام مصطفیٰ شاہ اتحادی جماعتوں کے مشترکہ امیدواروں کے طور پر کھڑے ہیں، جو بالترتیب اسپیکر اور ڈپٹی اسپیکر کے عہدے کے لیے متحدہ محاذ پیش کر رہے ہیں۔
انکے مخالف، پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ قانون ساز عامر ڈوگر اسپیکر کے لیے مشترکہ امیدوار کے طور پر میدان میں اترے ہیں ، جنید اکبر ڈپٹی اسپیکر کے عہدے کے لیے امیدوار ہیں۔
ان ٹائٹنز کا تصادم محض افراد کا مقابلہ نہیں ہے بلکہ ان وسیع تر سیاسی دھاروں کا عکاس ہے جو پورے ملک میں گزرتا ہے۔
اس انتخابی معرکے کا محور جمہوریت ہے جس سے نمائندگی اور احتساب کے رستے نکلیں گے
۔جمہیوری عمل میں قومی اسمبلی کے سپیکر کا اہم کردار ہوتا ہے، وہ مباحثوں کی صدارت کرتا ہے، نظم و نسق برقرار رکھتا ہے اور پارلیمانی کارروائی کو ہموار طریقے سے چلانے کو یقینی بناتا ہے۔
رسمی فرائض سے ہٹ کر، اسپیکر پارلیمانی قوانین اور روایات کے محافظ اور ایوان کی آواز کے طور پر اہم اثر و رسوخ رکھتا ہے۔
ڈپٹی سپیکر بھی ایک اہم کردار ادا کرتا ہے، سپیکر کے غیر حاضر ہونے کی صورت میں تمام قانون سازی کے کام کے انتظام میں معاونت کرتا ہے۔
خلاصہ یہ کہ یہ کردار پارلیمانی جمہوریت کا سنگ بنیاد ہیں، جنہیں انصاف، مساوات اور شفافیت کے اصولوں کو برقرار رکھنے کی ذمہ داری سونپی گئی ہے۔
سردار ایاز صادق اور غلام مصطفیٰ شاہ کی امیدواری ایک مشترکہ مقصد کے تحت متحد ہونے والی جماعتوں کے اتحاد کی نمائندگی کرتی ہے –
ایک مضبوط قوت جو مشترکہ وژن کے ساتھ قانون سازی کے ایجنڈے کو آگے بڑھانے کی کوشش کرتی ہے۔
ایک تجربہ کار سیاستدان، ایاز صادق اس سے قبل 2013 ءسے 2018ء تک قومی اسمبلی کے سپیکر کے طور پر خدمات انجام دے چکے ہیں۔
ان کے ساتھ، غلام مصطفیٰ شاہ اپنی قیادت کا اپنا برانڈ لاتے ہیں، جو اتحادی جماعتوں سے تعلق رکھتے اور ان کی اجتماعی امنگوں کو مجسم بناتے ہیں۔
ایک ساتھ، وہ تسلسل اور استحکام کے لیے ایک زبردست مقدمہ پیش کرتے ہیں، یہ دلیل دیتے ہوئے کہ ان کا ثابت شدہ ٹریک ریکارڈ دانشمندی اور انصاف کے ساتھ ایوان کی قیادت کرنے کی ان کی صلاحیت کے بارے میں بات کرتا ہے۔
دوسری طرف پی ٹی آئی کے حمایت یافتہ سپیکر کے امیدوار عامر ڈوگر کھڑے ہیں۔
ڈوگر، حکمران جماعت کے کٹر حامی، سیاست دانوں کی ایک نئی نسل کی نمائندگی کرتے ہیں، جو سیاسی منظر نامے پر اپنا نشان چھوڑنے کے لیے بے چین ہیں۔
ان کی نامزدگی پی ٹی آئی کی قومی اسمبلی میں اپنی طاقت کو مستحکم کرنے کے عزائم کا اشارہ دیتی ہے، اپنے قانون سازی کے ایجنڈے کو آگے بڑھانے کے لیے اسپیکر کے عہدے کو مستحکم سمجھتی ہے ۔
ان کے ساتھ، جنید اکبر، مجوزہ ڈپٹی اسپیکر، جوانی اور توانائی کے ساتھ اس منصب کیلئے موزوں ہیں، اور پارلیمانی امور پر ایک نئے ڈھنگ سے چلنے کے عزم کا اعادہ کرتے ہیں۔ان دو کیمپوں کے درمیان تصادم صرف شخصیات کے بارے میں نہیں ہے۔ یہ پاکستان کے مستقبل کے لیے مختلف نظریات کے بارے میں ہے۔ صادق اور شاہ کی حمایت کرنے والا اتحاد اتفاق رائے کی تعمیر اور شمولیت پر زور دیتے ہوئے ایک متوازن نقطہ نظر کی وکالت کرتا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ پاکستان کے چیلنجوں کا مقابلہ اتحاد کے ذریعے بہترین طریقے سے کیا جا سکتا ہے،صورتحال تمام جماعتوں کے مل کر عظیم تر بھلائی کے لیے کام کرنے کا تقاضہ کرتی ہے ۔ ان کی پچ ان لوگوں سے گونجتی ہے جو استحکام اور تسلسل کو ترجیح دیتے ہیں، صادق کے پچھلے دور کو موثر پارلیمانی قیادت کی روشنی کے طور پر دیکھتے ہیں۔
اس کے برعکس، ڈوگر اور اکبر کی پی ٹی آئی کی حمایت یافتہ جوڑی ایک متضاد بیانیہ پیش کرتی ہے، جو کہ ایک جارحانہ طرز حکمرانی اور فیصلہ کن کارروائی ہے۔ پی ٹی آئی کے حامی ڈوگر کو اپنے مقصد کے ایک چیمپئن کے طور پر دیکھتے ہیں، ایسا شخص جو انتہائی ضروری اصلاحات کے ذریعے آگے بڑھے گا اور حکومت کے ایجنڈے کو بھرپور طریقے سے آگے بڑھائے گا۔ ان کا کہنا ہے کہ پاکستان کو ایک ایسے سپیکر کی ضرورت ہے جو حکمران جماعت کے وژن کے مطابق ہو، کوئی ایسا شخص جو حکومت کی پالیسیوں کو عملی جامہ پہنانے کو یقینی بنا سکے۔تاہم، سیاسی بیان بازی کے سرے سے نیچے ایک زیادہ اہم حقیقت ہے۔ سپیکر کا کردار مثالی طور پر پارٹی لائنوں سے بالاتر ہونا چاہیے، جس میں غیر جانبداری اور انصاف پسندی کا جذبہ موجود ہو۔ سپیکر صرف کسی ایک پارٹی یا اتحاد کا نہیں بلکہ پورے ایوان کا نمائندہ ہوتا ہے، جسے تمام اراکین کے حقوق اور مراعات کو برقرار رکھنے کی ذمہ داری سونپی جاتی ہے۔ یہ غیر جانبداری اس بات کو یقینی بنانے کے لیے اہم ہے کہ پارلیمانی بحثیں تہذیب اور احترام کے ساتھ منعقد کی جائیں، ایک ایسے ماحول کو فروغ دیا جائے جہاں متنوع آوازیں سنی جا سکیں۔قومی اسمبلی کا آئندہ اجلاس محض ایک معمول کا معاملہ نہیں ہے۔ یہ پاکستان کی جمہوری پختگی کا امتحان ہے۔ سپیکر اور ڈپٹی سپیکر کا انتخاب جس انداز میں ہوتا ہے اس سے ملک کی جمہوریت کی حالت کا اندازہ ہوتا ہے۔ کیا یہ ایک ایسا عمل ہوگا جس میں شفافیت اور اتفاق رائے پیدا کیا جائے گا، جو جمہوری اصولوں کی حقیقی روح کی عکاسی کرتا ہے؟ یا یہ اقتدار کے مقابلے میں تبدیل ہو جائے گا، جہاں پارٹی کے مفادات پارلیمانی جمہوریت کے وسیع تر اصولوں کو زیر کرتے ہیں؟۔بطور شہری، ہمیں اپنے منتخب نمائندوں سے احتساب اور شفافیت کا مطالبہ کرنا چاہیے۔ سپیکر اور ڈپٹی سپیکر نہ صرف اپنی اپنی پارٹیوں بلکہ پاکستان کے عوام کے لیے بہت زیادہ ذمہ داری رکھتے ہیں۔ وہ ہماری جمہوریت کے محافظ ہیں، جنہیں ہمارے آئین میں درج اقدار کو برقرار رکھنے کا مقدس فریضہ سونپا گیا ہے۔قومی اسمبلی کے سیشن سے پہلے کے دنوں میں، اقتدار کی راہداریوں میں توقعات اور قیاس آرائیاں ہوں گی۔ بند دروازوں کے پیچھے مذاکرات ہوں گے، اتحاد بنائے جائیں گے، حکمت عملیاں بنیں گی۔ لیکن سیاسی چالوں کے درمیان، ہمیں اس انتخابی عمل کے نچوڑ کو فراموش نہیں کرنا چاہیے – ایسے لیڈروں کے انتخاب کی اہمیت جو دیانتداری، انصاف پسندی اور شمولیت کی اقدار کو مجسم کرتے ہوں۔
بالآخر، سپیکر اور ڈپٹی سپیکر کا انتخاب آنے والے برسوں میں پاکستان میں قانون سازی کے امور کی تشکیل کرے گا۔ یہ ایک ایسا فیصلہ ہے جو متعصبانہ مفادات کے طوق سے آزاد ہو کر سوچ سمجھ کر کیا جانا چاہیے۔ جیسا کہ قوم دھندلی سازوں کے ساتھ دیکھ رہی ہے، آئیے امید کرتے ہیں کہ اس انتخابی معرکے کا نتیجہ جمہوریت کی حقیقی روح کی عکاسی کرے گا – انصاف، مساوات اور تمام پاکستانیوں کی اجتماعی بہبود کے عزم کامظہر بنے گا۔

زاد راہ ۔۔۔سید علی رضا نقوی

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.